امی میں اپنے جھوٹے بھائی محمد کے بغیر بکریاں چرانےنہیں جاوں گی ،وہ وقت جب حلیمہ سعدیہ بکریوں کو اپنی بیٹی شیما کے ساتھ چرانے کے لیے بھیجتی تو۔۔۔۔۔ ایمان کو گرما دینے والی تحریر – Tareekhi Waqiat Official Urdu Website
You are here
Home > اسپیشل سٹوریز > امی میں اپنے جھوٹے بھائی محمد کے بغیر بکریاں چرانےنہیں جاوں گی ،وہ وقت جب حلیمہ سعدیہ بکریوں کو اپنی بیٹی شیما کے ساتھ چرانے کے لیے بھیجتی تو۔۔۔۔۔ ایمان کو گرما دینے والی تحریر

امی میں اپنے جھوٹے بھائی محمد کے بغیر بکریاں چرانےنہیں جاوں گی ،وہ وقت جب حلیمہ سعدیہ بکریوں کو اپنی بیٹی شیما کے ساتھ چرانے کے لیے بھیجتی تو۔۔۔۔۔ ایمان کو گرما دینے والی تحریر

حلیمہ سعدیہ جب بکریوں کو چرانے بھیجتی تھی تو ساتھ شیما کو بھی بھیجتی تھی ایک دن بکریاں چرانے کے لیے شیما نے کافی دیر کردی تو حلیمہ سعدیہ نے فرمایا” شیما آج تم نے بھت دیر کردی اب تک بکریاں چرانے نہیں گئ تم “” امی میں نے آج بکریاں

چرانے نہیں جانا میں اکیلی ہوں اور بکریاں زیادہ ہے گرمی کا موسم ھے بھاگ بھاگ کر میں تھک جاتی ہوں مجھ اکیلی سے یہ نہیں ہوتا اب آپ میرے ساتھ کسی کو بھیجا کرے ” شیما نے فرمایا” بیٹی گھر میں تو اور کوئی بھی نہیں جس کو آپکے ساتھ بھیج سکوں اکیلے ہی جانا پڑے گا ” حلیمہ سعدیہ نے فرمایا لیکن شیما مان نہیں رہی تھی کہ وہ اکیلی اب کسی صورت نہیں جاے گی آخر اس نے کہا ” امی جان میں ایک شرط پہ جاوں گی اگر آپ میرے ساتھ میرے چھوٹے بھائی محمد کو بھیج دے تو میں بکریاں چرانے چلی جاوں گی ورنہ کسی صورت میں نے نہیں جانا “حلیمہ نے فرمایا ” بیٹی تیرا بھائی محمد تو بھت چھوٹا ھے ایک بکریوں کو سنبھالنا دوسرا ایک چھوٹے بچے کو سنبھالنا بھت کھٹن کام ہے میری بچی “” امی میں اکیلی جاونگی تو بکریاں بلکل نھی سنبھال پاوں گی اور اگر میرا چھوٹا بھائی محمد میرے ساتھ ہوگا تو بکریوں کو سنبھالنے کی ضرورت ہی محسوس نہیں ہوتی “ماں نے پوچھا ” اے شیما یہ تو کیا کہہ رہی ہے مجھے سمجھ نہیں آرہا “شیما نے کہا ” امی جان ایک دفع پہلے میں اپنے بھائی کو ساتھ لیکر گئ تھی بکریاں چرانے کے لیے میں نے دیکھا کہ بکریاں جلدی جلدی چر کر گاس کھانے لگی پھر جس جگہ میں اور محمد بیٹھے ہوے تھے بھائی میرے گود میں تھا تو تمام بکریاں وہاں جمع ہوگی ، اور تمام بکریاں محمد کے نزدیک ہوکر اسکا چہرہ دیکھنے لگی۔۔۔۔اے ازل کے حسین اے ابد کے حسین۔۔۔۔تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں.


Top