’’ پاکستان کا آخری جمہوری آپشن عمران خان ہی ہے۔۔۔ ‘‘ وزیر اعظم کا اسمبلیاں تحلیل کرنے پر غور۔۔۔ اپوزیشن جماعتوں کو بڑا پیغام بھجوا دیا گیا – Tareekhi Waqiat Official Urdu Website
You are here
Home > پا کستا ن > ’’ پاکستان کا آخری جمہوری آپشن عمران خان ہی ہے۔۔۔ ‘‘ وزیر اعظم کا اسمبلیاں تحلیل کرنے پر غور۔۔۔ اپوزیشن جماعتوں کو بڑا پیغام بھجوا دیا گیا

’’ پاکستان کا آخری جمہوری آپشن عمران خان ہی ہے۔۔۔ ‘‘ وزیر اعظم کا اسمبلیاں تحلیل کرنے پر غور۔۔۔ اپوزیشن جماعتوں کو بڑا پیغام بھجوا دیا گیا

اسلام آباد ( مانیٹرنگ ڈیسک ) آج کے روز ملکی سیاست میں ہلچل اس وقت مچی جس وقت اچانک وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے استعفے کا اعلان کر دیا ، جس کے بعد سارے پاکستان کی نظریں نئے وزیر خزانہ کی جانب لگ گئیں اس حوالے سے وزیر اعظم عمران خان

نے وفاقی وزیر عمر ایوب کو وزیر اعظم ہاؤس طلب کیا جبکہ مشاورت کے لیے اسد عمر کو بھی وزیر اعظم ہاؤس طلب کیا گیا ، لیکن سینیر صحافی نے ایسی خبر بریک کر دی ہے کہ پورا ملک حیران رہ گیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی شاہین صبہائی کی جانب سے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام میں کہا گیا ہے کہ ’’ عمران خان دلیرانہ فیصلہ، اسد عمر کو بجٹ سے کچھ دیر پہلے یوں جانے دینے کا مطلب ہے کہ اگر وزارتوں کے رد و بدل کے بعد بھی حالات ٹھیک نہ ہوئے تو عمران خان اسمبلیاں تحلیل کرنے کے لیے بھی آمادہ ہیں ، اس وقت اپوزیشن کو خوشیاں منانے کی کوئی ضرورت نہیں ہے ، کیونکہ عمران خان انہی کا مچایا ہوا گند صاف کر رہے ہیں ، انکا کوئی چانس نہیں ، عمران خان ہی جمہوریت کی آخری آپشن ہیں ‘‘۔ نے وفاقی وزیر عمر ایوب کو وزیر اعظم ہاؤس طلب کیا جبکہ مشاورت کے لیے اسد عمر کو بھی وزیر اعظم ہاؤس طلب کیا گیا ، لیکن سینیر صحافی نے ایسی خبر بریک کر دی ہے کہ پورا ملک حیران رہ گیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق سینئر صحافی شاہین صبہائی کی جانب سے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پیغام میں کہا گیا ہے کہ ’’ عمران خان دلیرانہ فیصلہ، اسد عمر کو بجٹ سے کچھ دیر پہلے یوں جانے دینے کا مطلب ہے کہ اگر وزارتوں کے رد و بدل کے بعد بھی حالات ٹھیک نہ ہوئے تو عمران خان اسمبلیاں تحلیل کرنے کے لیے بھی آمادہ ہیں ، اس وقت اپوزیشن کو خوشیاں منانے کی کوئی ضرورت نہیں ہے ، کیونکہ عمران خان انہی کا مچایا ہوا گند صاف کر رہے ہیں ، انکا کوئی چانس نہیں ، عمران خان ہی جمہوریت کی آخری آپشن ہیں ‘‘۔


Top